Urdu Khabrain
Urdu Khabrain is the world most populated Urdu News website. You can find and read daily Urdu news.

The Gilgit-Baltistan bungle

0

The Gilgit-Baltistan (Empowerment and Self-Governance) Order, 2009, approved by the cabinet on Aug 29 seeks to grant self-rule to the people of the area on the pattern of the autonomy enjoyed by Azad Jammu and Kashmir. As the government itself admits, the

Asif Ezdi, "The Gilgit-Baltistan bungle,” The News. 2009-10-10

گلگت بلتستان (طاقتور اور خود حکومتی) آرڈر، 2009، کابینہ نے اگست 29 کو منظوری دے دی ہے کہ آزاد جموں اور کشمیر سے لطف اندوز خودمختاری کی نمائش پر علاقے کے عوام کو خود کو اقتدار فراہم کرنا ہے. جیسا کہ حکومت خود کو قبول کرتا ہے

آصف عدی، "گلگت بلتستان بنگال،” نیوز. 2009-10-10
[English Edition View]

The Gilgit-Baltistan bungle
By
Asif Ezdi
The Gilgit-Baltistan (Empowerment and Self-Governance) Order, 2009, approved by the cabinet on Aug 29 seeks to grant self-rule to the people of the area on the pattern of the autonomy enjoyed by Azad Jammu and Kashmir. As the government itself admits, the promulgation of this Order, which has now been signed by Zardari, implies a rejection of the demand that Gilgit-Baltistan be made a province of Pakistan and that its people be given the same constitutional rights, including representation in the National Assembly and the Senate. The reason given by the government is that acceptance of these demands would go against Pakistan’s obligations under UN Security Council resolutions on Kashmir, which give Islamabad administrative powers over the territory but debar any change in its status.
Given this self-imposed constraint, the government had only limited room for action. It could only make those changes in the constitutional structure of Gilgit-Baltistan which would devolve more powers to the people of the territory, but not affect its international status. The last two constitutional measures adopted by the government for the Northern Areas – in 2000 and 2007 – had also sought to give more powers to the elected Assembly within this constraint. The scope for further devolution was thus quite small. It is therefore no wonder that the changes introduced by the latest constitutional package are by no means of a radical nature. The most significant change is that a Council has been set up on the same pattern as exists in Azad Kashmir. It will have the power to legislate on more or less the same subjects as the Azad Kashmir Council. The federal government will have a built-in majority in the Gilgit-Baltistan Council, as in the Azad Kashmir Council. The practical consequence is that legislation on these matters will continue to be controlled by  islamabad. But this would not affect local autonomy because these subjects, in any case, correspond to the Federal List in the Constitution and the purpose is to ensure harmony with the laws of Pakistan.
Some of the changes made in the new law are cosmetic, such as renaming the chairman as governor, the chief executive as chief minister and advisers as ministers. On the one hand, the new designations seek to highlight similarities with a province; and on the other hand, they underscore difference from Azad Kashmir. The renaming of Northern Areas as Gilgit-Baltistan has been welcomed widely as it gives the territory a name that its people can identify with, and meets a long-standing demand. The two parts of the name are separated by a hyphen, rather than the word "and,” apparently for no other reason than brevity.
Since the purpose is to equate Gilgit-Baltistan with Azad Kashmir, the government needs also to do two more things. One, it should rename the new legal framework for Gilgit-Baltistan as the Interim Constitution, just as the fundamental law of Azad Kashmir is called. Two, the new constitutional package should be passed by the elected Assembly of Gilgit-Baltistan, just as the Azad Kashmir Interim Constitution was passed by the elected Assembly of Azad Kashmir, instead of being promulgated through executive fiat. Despite all the changes, some real and others cosmetic, the new Gilgit-Baltistan Order is not going to satisfy the demand of the local people for an end to their political disenfranchisement. Their main demands – provincial status, representation in Parliament, and constitutionally guaranteed rights – have not been met. They acceded to Pakistan 62 years ago and cannot be expected to wait indefinitely to start enjoying the rights of full citizens. To deny to them any longer their due place in Pakistan amounts to punishing them for India’s perfidy on Kashmir. The government therefore has to find a way that will give them their full rights within the federation of Pakistan and yet is in accord with the country’s international commitments under the UN Security Council resolutions on Kashmir.
This can be done by giving Gilgit-Baltistan provincial status on a purely provisional basis, pending the implementation of UN resolutions. If Pakistan does so now, after sixty years first of stalling and then of refusal by India to allow a plebiscite, there will be no breach of our international commitments, nor will such a step affect the sanctity of those resolutions, or absolve India of its obligation under international law to cooperate in their implementation. However, to preclude any misgivings, Pakistan will have to coordinate this step with the people and government of Azad Kashmir and with the APHC as the representative body of Kashmiris on the other side of the Line of Control. The concerns of Kashmiris in Azad Kashmir and Occupied Kashmir are two-fold. First, their position has been that Gilgit-Baltistan is part of Jammu and Kashmir and cannot accede to Pakistan separately from the rest of the state. Second, Kashmiri leaders, both from Azad Kashmir and from the occupied part, have expressed the fear that the accession of Gilgit-Baltistan would be taken as Pakistan’s acquiescence in the permanent partition of Kashmir and would harm the freedom struggle in Occupied Kashmir. Such misgivings have been voiced by Yasin Malik and by some political circles in Azad Kashmir.
These apprehensions are not unfounded, but the good news is that they can be overcome if both Gilgit-Baltistan andAzad Kashmir provisionally join Pakistan, either jointly as one entity or separately but simultaneously as two entities. Gilgit-Baltistan acceded to Pakistan in 1947. Azad Kashmir could do so now on behalf of the entire state, including the occupied part, through a resolution of the Azad Kashmir Assembly. This should be followed by an amendment to the Pakistani Constitution, declaring that: (a) the final status of Jammu and Kashmir is to be decided through a plebiscite in accordance with UN resolutions; (b) until the final status of the state has been so determined, Pakistan admits it to the Federation on a provisional basis in accordance with the wish expressed by the elected representatives of the liberated territory; and (c) Pakistan remains committed to the implementation of the UN resolutions.
For two generations, Azad Kashmir and Gilgit-Baltistan have been languishing in a constitutional limbo. Their international status has also remained frozen in a nebulous state. This has stunted their democratic and constitutional evolution and prevented the people from participating fully, as they wish, in the political life of Pakistan, giving rise to some disaffection.
This problem is especially acute in Gilgit-Baltistan. The government has sought to address it through constitutional tinkering. Its latest announcement bestowing "internal and political autonomy” will be the fourth such attempt, after those of 1994, 2000 and 2007. The mixed reaction of the local people and the largely negative response in Azad Kashmir and of some APHC leaders show that half-measures will not be enough. Typically, the new law was not presented before its adoption for public or parliamentary debate. Instead, the government only held some closed-door briefings for the parliamentary committee concerned and a few selected leaders from the Northern Areas. Representatives of Azad Kashmir and the APHC were not consulted. The
government clearly still treats the matter as a bureaucratic issue to be tackled bureaucratically. The demand for provincial status for Gilgit-Baltistan will not go away. The question that the government faces is not whether to give this status but how to do it in a manner that also leaves the UN resolutions on Kashmir untouched and keeps intact Pakistan’s commitment to their implementation. The government has to find a way to do all this in a way that also takes Azad Kashmir and the APHC on board. Not an easy undertaking but doable. It should take the following steps: First, withhold promulgation of the Self-Governance Order; second, start a public debate in Pakistan and consultation with representative Kashmiris on both sides of the LoC on a provisional
accession of Jammu and Kashmir to Pakistan; third, leave it to the elected Assembly of Gilgit-Baltistan to pass a law on an Interim Constitution for the territory; fourth, ask the Azad Kashmir Assembly to pass a resolution declaring provisional accession of the state to Pakistan pending the implementation of UN resolutions; fifth, amend the Constitution to provisionally admit Jammu and Kashmir to the Federation; sixth, and last, ignore any protests, warnings and threats from India.
The writer is a former member of the Pakistan Foreign Service. Email: asifezdi@yahoo.com
_____________________________________________________________________________________________
Asif Ezdi, “The Gilgit-Baltistan bungle,” The News. 10-09-2009.
Keywords: Political science, Political leaders, Politics, Democracy, International law, Law, Parliament,
Constitution, National Assembly, citizens, Kashmir issue, President Zardari, Pakistan, United Nations, Gilgit,
Baltistan, India

[Urdu Edition]
گلگت بلتستان بنگال کی طرف سے
آصف عزدی
گلگت بلتستان (شمولیت اختیار اور خود حکومتی) آرڈر، 2009، کابینہ نے اگست 29 کو منظور کیا
آزاد جموں اور کشمیر سے لطف اندوز خودمختاری کے نمونے پر علاقے کے لوگوں کو اپنی خود مختاری عطا فرما. جیسا کہ
حکومت خود کو قبول کرتی ہے، اس آرڈر کے فروغ، جو اب زرداری کی طرف سے دستخط کئے گئے ہیں، ایک ردعمل کا مطلب ہے
گلگت بلتستان کا مطالبہ کیا گیا ہے کہ پاکستان کا صوبہ بنایا جائے اور اس کے عوام کو اسی طرح دیا جائے
آئینی حقوق، قومی اسمبلی اور سینیٹ میں نمائندگی سمیت. اس کی وجہ سے
حکومت یہ ہے کہ ان مطالبات کو قبول کرنے کے بعد اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے تحت پاکستان کی ذمہ داریوں کا سامنا کرنا پڑے گا
کشمیر پر قراردادیں، جس پر اسلام آباد انتظامیہ کو خطے پر اختیار کرتی ہے لیکن اس میں کسی بھی تبدیلی کو روکنا ہے
حالت.
اس خود کو عدم وقفے سے روکنے کے لۓ، حکومت صرف کارروائی کے لئے کمرہ محدود تھا. یہ صرف ان کو بنا سکتا ہے
گلگت بلتستان کے آئینی ساخت میں تبدیلی، جو لوگوں کو زیادہ طاقتوں سے دور کرے گی
علاقے، لیکن اس کی بین الاقوامی حیثیت کو متاثر نہیں. حکومت کے ذریعہ آخری دو آئینی اقدامات کئے گئے ہیں
شمالی علاقوں – 2000 اور 2007 میں بھی اس کے اندر اندر منتخب اسمبلی میں مزید طاقتیں بھی شامل تھیں
رکاوٹ. مزید بہاؤ کے لئے گنجائش بہت کم تھا. لہذا اس بات کا کوئی تعجب نہیں ہے کہ تبدیلییں
تازہ ترین آئینی پیکیج کے ذریعہ متعارف کرایا جاسکتا ہے کہ کسی بنیاد پرست فطرت کا کوئی ذریعہ نہیں.
سب سے اہم تبدیلی یہ ہے کہ آزاد کشمیر میں وجود میں ایک ہی پیٹرن پر ایک کونسل قائم کی گئی ہے. یہ ہو گا
آزادی کشمیر کونسل کے طور پر کم از کم اسی موضوع پر قانون سازی کرنے کی طاقت ہے. وفاقی حکومت
آزاد کشمیر کونسل میں گلگت بلتستان کونسل میں اکثریت کی تعمیر میں اضافہ ہوگا. عملی
نتیجہ یہ ہے کہ ان معاملات پر قانون ساز اسلام آباد کی طرف سے کنٹرول جاری رکھے گا. لیکن یہ نہیں کرے گا
مقامی خودمختاری کو متاثر کرتا ہے کیونکہ ان مضامین کسی بھی صورت میں، آئین کے وفاقی فہرست سے متعلق ہیں اور
مقصد پاکستان کے قوانین کے ساتھ ہم آہنگی کو یقینی بنانا ہے.

نئے قانون میں کئے جانے والے کچھ تبدیلیاں کاسمیٹک ہیں، جیسے چیئرمین کو گورنر، سربراہ کا نام تبدیل کرنا
وزراء کے طور پر وزیر اعلی اور مشیر کے طور پر ایگزیکٹو. ایک طرف، نئے نمونے کو اجاگر کرنا چاہتے ہیں
ایک صوبے کے ساتھ مماثلت؛ اور دوسری طرف، وہ آزاد کشمیر سے متفق ہیں.
گلگت بلٹستان کے طور پر شمالی علاقوں کا نام تبدیل کرنا بہت بڑا خیر مقدم کیا گیا ہے کیونکہ اس کا نام اس علاقے کو دیتا ہے
اس کے لوگ اس کی شناخت کر سکتے ہیں اور ایک طویل عرصہ سے مطالبہ کرتے ہیں. نام کے دو حصے الگ الگ ہیں
ہفین، بجائے "اور” لفظ کے بجائے بظاہر سے کوئی اور وجہ نہیں.
چونکہ آزاد کشمیر کے ساتھ گلگت بلتستان کا مساوات اس مقصد کو پورا کرنے کے لئے ہے، حکومت کو بھی دو اور کرنا ہوگا
چیزیں ایک، اسے گلگت بلتستان کے لئے انٹرویو آئین کے طور پر نیا قانونی فریم ورک تبدیل کرنا چاہئے، جیسے ہی
آزاد کشمیر کا بنیادی قانون کہا جاتا ہے. دو، نئے آئینی پیکج کو منتخب کیا جانا چاہئے
گلگت بلتستان کی اسمبلی، جیسا کہ آزاد کشمیر کے لامحدود آئین کو منتخب اسمبلی کی طرف سے منظور کیا گیا تھا
آزاد کشمیر، بجائے ایگزیکٹو فریٹ کے ذریعے فروغ دینے کی بجائے.
تمام تبدیلیوں کے باوجود، کچھ حقیقی اور دیگر کاسمیٹک، گلگت بلتستان کے آرڈر کو مطمئن نہیں کیا جا رہا ہے
مقامی لوگوں کا مطالبہ ان کے سیاسی معاوضہ ختم کرنے کے لئے. ان کی بنیادی مطالبات – صوبائی حیثیت،
پارلیمنٹ میں نمائندگی، اور آئینی طور پر ضمانت شدہ حق – ملاقات نہیں کی گئی ہے. انہوں نے پاکستان پر الزام لگایا
62 سال پہلے اور مکمل شہریوں کے حقوق سے لطف اندوز شروع کرنے کے لئے غیر یقینی طور پر انتظار کی توقع نہیں کی جا سکتی. ان سے انکار کرنے کے لئے
پاکستان میں ان کی موجودگی زیادہ تر کشمیر پر بھارت کے عصمت مندانہ طور پر انہیں سزا دینے کی ضرورت ہے. حکومت نے
اس وجہ سے یہ راستہ ڈھونڈنا پڑتا ہے کہ انہیں پاکستان کے فیڈریشن کے اندر اپنے مکمل حقوق دے گا
کشمیر پر اقوام متحدہ کے سیکورٹی کونسل کے قراردادوں کے تحت ملک کی بین الاقوامی وعدوں کے ساتھ.
یہ گلگت بلتستان صوبائی حیثیت کو خالص طور پر غیر معمولی بنیاد پر دے کر کیا جا سکتا ہے
اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عمل درآمد اگر پاکستان اب ایسا کرتا ہے، اس کے بعد سوریہ سال پہلے اور پھر انکار کرنے کے بعد
بھارت کو آزادی کی اجازت دینے کے لئے، ہماری بین الاقوامی وعدوں کی خلاف ورزی نہیں ہوگی، اور نہ ہی اس طرح کے قدم کو متاثر ہوگا
ان قراردادوں کی حاکمیت، یا ان کے ساتھ تعاون کرنے کے لئے بین الاقوامی قانون کے تحت اپنی ذمہ داریاں پوری کریں
عملدرآمد. تاہم، کسی بھی غلطی کو روکنے کے لئے، پاکستان کو اس قدم کو لوگوں کے ساتھ اور باہمی تعاون کرنا ہوگا
آزاد کشمیر کی حکومت اور اے پی ایچ سی کے ساتھ کشمیریوں کے نمائندے کی حیثیت سے دوسری طرف
کنٹرول لائن.

آزاد کشمیر اور قبضہ شدہ کشمیر میں کشمیر کے خدشات دو گنا ہیں. سب سے پہلے، ان کی پوزیشن یہ ہے کہ
گلگت بلتستان جموں و کشمیر کا حصہ ہے اور باقی ریاستوں سے علیحدہ علیحدہ پاکستان کو قبول نہیں کرسکتا ہے.
دوسرا کشمیر کے رہنماؤں، آزاد کشمیر اور قبضے کے حصہ سے دونوں نے خوف ظاہر کیا ہے کہ
گلگت بلٹستان کے حصول کشمیر کے مستقل تقسیم میں پاکستان کے لشکر کی حیثیت سے لے جایا جائے گا
کشمیر میں آزادانہ جدوجہد کو نقصان پہنچے گا. یااس ملک کی طرف سے اور اس طرح کی غلطیوں کو آواز دی گئی ہے
آزاد کشمیر میں کچھ سیاسی حلقوں.
یہ تشویش ناقص نہیں ہیں، لیکن خوشخبری یہ ہے کہ گلگت بلتستان اور دونوں دونوں کو قابو پانے میں مدد ملے گی
آزاد کشمیر کو باہمی طور پر ایک بااختیار یا علیحدہ علیحدگی کے ساتھ پاکستان میں شمولیت اختیار کردی گئی ہے
اداروں گلگت بلتستان نے 1947 میں پاکستان کو جمع کیا. آزاد کشمیر اب پوری حالت کی طرف سے کر سکتا ہے،
آزاد کشمیر اسمبلی کے ایک قرارداد کے ذریعے قبضہ شدہ حصہ بھی شامل ہے. اس کی پیروی کرنا چاہئے
پاکستان کے آئین میں ترمیم، یہ اعلان کرتے ہوئے کہ: (ا) جموں و کشمیر کی آخری حیثیت کا فیصلہ کیا جائے گا
اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق ایک آزادی کے ذریعہ؛ (ب) ریاست کی حتمی حیثیت تک اس وقت تک مقرر نہیں کیا گیا ہے،
پاکستان نے فیڈریشن کو عارضی بنیاد پر قبول کیا ہے جس کے مطابق منتخب کیا گیا ہے
آزادانہ علاقہ کے نمائندے؛ اور (ج) پاکستان اقوام متحدہ کے عمل درآمد کے لئے عزم ہے
قراردادیں.
دو نسلوں کے لئے، آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان آئینی لامبو میں لچک رہے ہیں. ان کے
بین الاقوامی حیثیت ایک نیبوس ریاست میں بھی منجمد رہا ہے. اس نے ان کے جمہوری اور آئین کو ختم کر دیا ہے
ارتقاء اور لوگوں کو مکمل طور پر حصہ لینے کی روک تھام، جیسے وہ چاہتے ہیں، پاکستان کی سیاسی زندگی میں، اضافہ
کچھ ناانصافی
گلگت بلتستان میں یہ مسئلہ خاص طور پر شدید ہے. حکومت نے اسے آئینی طور پر حل کرنے کی کوشش کی ہے
ٹکرانا. اس کی تازہ ترین اعلان "داخلی اور سیاسی خودمختاری” کو حاصل کرنے کے بعد چوتھا ایسی کوشش ہوگی
1994، 2000 اور 2007 میں سے ان لوگوں نے مقامی عوام اور آزادانہ طور پر آزادانہ طور پر منفی ردعمل کی مخلوط رد عمل کی
کشمیری اور بعض اے پی ایچ سی کے رہنماؤں سے پتہ چلتا ہے کہ نصف اقدامات کافی نہ ہوں گے.

عام طور پر، نیا قانون عوامی یا پارلیمانی بحث کے لئے اپنا اختیار لینے سے قبل پیش نہیں کیا گیا تھا. اس کے بجائے،
حکومت نے متعلقہ پارلیمانی کمیٹی کے لئے کچھ بند دروازے اور صرف چند منتخب کئے ہیں
شمالی علاقوں کے رہنماؤں. آزاد کشمیر اور اے پی ایچ سی کے نمائندوں سے مشورہ نہیں کیا گیا. The
حکومت واضح طور پر اب بھی معاملے کو بیوروکریٹک مسئلہ کے طور پر بیوروکریٹ سے نمٹنے کے طور پر کام کرتا ہے.
گلگت بلتستان کے صوبائی حیثیت کا مطالبہ نہیں ہو گا. سوال یہ ہے کہ حکومت کا سامنا نہیں ہے
چاہے اس حیثیت کو دینا لیکن اس طرح سے ایسا کرنے کے لئے کہ کشمیر پر مسلط کردہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کو بھی چھوڑ دیں
اور ان کے عمل میں پاکستان کے عزم کو برقرار رکھنا ہے. حکومت کو یہ سب کچھ کرنے کا راستہ تلاش کرنا پڑتا ہے
جس طرح سے آزادی کشمیر اور اے پی ایچ سی بورڈ پر بورڈ بھی لیتا ہے. آسان آسان نہیں ہے لیکن قابل.
اسے مندرجہ ذیل اقدامات کرنا چاہئے: سب سے پہلے، خود گورننس آرڈر کے فروغ کو روکنا؛ دوسرا، ایک عوامی شروع
پاکستان میں بحث اور علاقائی قرضے کے دونوں اطراف کے نمائندے کشمیر کے ساتھ مشاورت پر عارضی طور پر
جموں و کشمیر کی رسائی پاکستان کو. تیسری، گلگت بلتستان کے منتخب اسمبلی میں قانون منظور کرنے کے لئے چھوڑ دو
علاقے کے لئے لامحدود آئین پر؛ چوتھا، آزاد کشمیر اسمبلی سے ایک قرارداد منظور کرنے کا مطالبہ کریں
اقوام متحدہ کے قراردادوں پر عملدرآمد پر پابندی لگانے کے لئے پاکستان کو ریاست کے عدم استحکام؛ پانچویں، ترمیم کریں
جمہوریہ جموں و کشمیر فیڈریشن میں باضابطہ طور پر منظور چھٹی، اور آخری، کسی بھی احتجاج کو نظر انداز نہ کریں،
بھارت سے انتباہ اور دھمکی
مصنف پاکستانی خارجہ سروس کا ایک سابق رکن ہے. ای میل: asifezdi@yahoo.com
_____________________________________________________________________________________________
آصف عدی، "گلگت بلتستان بنگال،” نیوز. 10-09-2009.
مطلوبہ الفاظ: سیاسی سائنس، سیاسی رہنماؤں، سیاست، جمہوریت، بین الاقوامی قانون، قانون، پارلیمان،
آئین، قومی اسمبلی، شہری، کشمیر کے مسئلے، صدر زرداری، پاکستان، اقوام متحدہ، گلگت،
بالٹستان، بھارت

PDF edition is here: The Gilgit-Baltistan bungle By Asif Ezdi

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

تبصرے