Loading...

کیٹی بندر کے ساحل پر آںے والی مردہ ڈولفن کراچی منتقل

0

ٹھٹھہ: سندھ کے علاقے کیٹی بندر کے ساحل پر آںے والی مردہ ڈولفن کراچی منتقل کردی گئی۔

تفصیلات کے مطابق صوبہ سندھ کے علاقے کیٹی بندر کے ساحل پر آںے والی 50 من مردہ ڈولفن کو کراچی منتقل کردیا گیا۔

ڈولفن اپنی جسامت کی وجہ سے ٹرک میں پوری طرح سما نہیں رہی اور باہر لٹک رہی ہے۔ گاڑی میں ڈولفن کو ڈھانپنے کے لیے شامیانے کا استعمال کیا گیا۔

یاد رہے کہ قوی الجثہ ڈولفنز اکثر اوقات راستہ بھٹک کر ساحل یا نہروں میں آنکلتی ہیں اور وہیں مر جاتی ہیں۔

دریائے سندھ کی نابینا ڈولفن دنیا کی نایاب ترین قسم ہے جو صرف دریائے سندھ اور بھارت کے دریائے گنگا میں پائی جاتی ہے۔ یہ ڈولفن قدرتی طور پر اندھی ہوتی ہے اور پانی میں آواز کے سہارے راستہ تلاش کرتی ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ دونوں ممالک کی ڈولفنز کی نسل میں معمولی سا فرق ہے جس کے باعث انہیں الگ الگ اقسام قرار دیا گیا ہے۔

راستہ بھولنے اور دیگر وجوہات کے باعث اس ڈولفن کو اپنی بقا کا خطرہ لاحق ہے اور ان کی تعداد میں تیزی سے کمی آتی جارہی ہے۔

ڈبلیو ڈبلیو ایف کے مطابق دریائے سندھ میں اس ڈولفن کی تعداد محض 600 سے بھی کم رہ گئی ہے اور اس کے تحفظ کے لیے ہنگامی اقدامات نہ اٹھائے گئے تو دریائے سندھ سے اس ڈولفن کا خاتمہ ہوجائے گا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں
Loading...
تبصرے
Loading...