Loading...

یتیم بچے

0

آپؐ‎مسجد نبوی میں بیٹھے تھے۔ایک پریشان حال شخص بھاگم بھاگ آیا اور گلو گیر لہجے میں آپؐ‎‎سے کہا”تین دن سے میرا بچہ لاپتہ ہےآپؐ ایک بار دعا کردیں مجھے یقین ہے میرا بچہ مجھے مل جائے گا۔آپؐ‎نے دعا کی اور اس شخص کی اشکشوئی فرمانے لگے۔اسی اثنا میں ایک دوسرا شخص داخل ہوا اور

قریب آکرآپؐ‎‎سے عرض کی کہ”یہ شخص کیا کہہ رہا ہے”؟۔آپؐ‎‎نے فرمایا “اس کا بچہ لاپتہ ہوگیا ہے”۔اس نے عرض کی ،میں نے کچھ دیر پہلے اس کےبچے کو فلاں مقام پہ کچھ یتیم بچوں کیساتھ کھیلتا دیکھا ہے”یہ سن کر بچے کا باپ کھل اٹھا،بے ساختہ اٹھا اور جانے لگا۔آپؐ‎‎نے آواز دی”رک جائو۔و”ہ شخص پلٹا اور باادب کھڑا ہوگیا۔آپؐ‎‎نے فرمایا “جب بچے سے ملو تو اس کو بیٹا کہہ کر مت پکارنا اور

گلے مت لگانابس ہاته سے پکڑ کر گھر لے جانا۔ اس شخص نے “حیرت کے عالم میں وجہ پوچھی۔آپؐ‎‎نے فرمایا “وہاں اور بھی یتیم بچے ہیں تم نے اگر بچے کو بیٹا کہہ کر پکارا اور لارڈپیار کیا تو یتیم بچے آرزو کریں گے کہ کاش ہمارا بھی باپ زندہ ہوتا۔”

شاید آپ یہ بھی پسند کریں
Loading...
تبصرے
Loading...