دنیا کا سب سے چھوٹا اور آباد جزیرہ… صرف ایک گھر جتنا!

پورے جزیرے کا مجموعی رقبہ صرف 310 مربع میٹر ہے جو بلاشبہ بہت کم ہے۔ (فوٹو: وکی پیڈیا)

مزید خبریں

نیویارک: کینیڈا اور امریکا کے درمیان واقع ’الیگزینڈریا بے‘ میں سیکڑوں چھوٹے چھوٹے جزیروں کی ایک پٹی ہے جو قانونی طور پر امریکی ریاست نیویارک کا حصہ تصور کی جاتی ہے۔ ان سیکڑوں جزیروں کے درمیان میں دنیا کا سب سے چھوٹا جزیرہ ہے جس کا رقبہ صرف 310 مربع میٹر ہے۔

ویسے تو اس کا نام ’’ہب آئی لینڈ‘‘ ہے لیکن امریکا اور کینیڈا کے رہائشی اسے ’’جسٹ روم اینف آئی لینڈ‘‘ کے نام سے زیادہ جانتے ہیں کیونکہ اس پر صرف ایک چھوٹا سا مکان بنا ہوا ہے جس کے باہر بیٹھنے کی چھوٹی سی جگہ ہے، ایک درخت ہے اور بس!

اس جزیرے کو 1950 کے عشرے میں امریکا کے سائزلینڈ خاندان نے فرصت کے لمحات گزارنے کےلیے خریدا تھا لیکن انہیں معلوم نہیں تھا کہ یہ جگہ دنیا بھر میں سیاحوں کی توجہ کا مرکز بھی بن جائے گی۔

جزیرے پر لکڑی کے چھوٹے لیکن خوبصورت مکان کی تعمیر اور درخت لگانے کا سارا کام اسی خاندان کے بزرگوں نے آج سے ساٹھ ستّر سال پہلے کروایا تھا۔ آج یہ جزیرہ اپنے حسن و انفرادیت کی وجہ سے آنے جانے والے سیاحوں کو اپنی طرف متوجہ کرتا ہے۔

تاہم، دنیا کے اس سب سے چھوٹے اور آباد جزیرے کے ساتھ ایک مسئلہ بھی ہے۔ یہ سطح سمندر سے بہت ہی معمولی سا اونچا ہے اس لیے سطح سمندر میں ہونے والا تھوڑا سا اضافہ بھی اس کے بیشتر حصے کو ڈبو دیتا ہے جس میں سے مکان اور درخت ہی باہر نکلے ہوئے بہت عجیب لگتے ہیں۔

حال ہی میں گنیز ورلڈ ریکارڈ نے بھی ’جسٹ روم اینف آئی لینڈ‘ کو دنیا کے سب سے چھوٹے آباد جزیرے کا درجہ دے دیا ہے جس پر سائزلینڈ خاندان کے افراد بے حد خوش ہیں۔ اس سے پہلے دنیا کے چھوٹے اور آباد جزیرے کا اعزاز ’’بسپ راک‘‘ کو حاصل تھا جو برطانوی ساحل کے قریب واقع جزیروں کے ایک سلسلے میں واقع ننھا سا جزیرہ ہے۔ البتہ، جسٹ روم اینف آئی لینڈ کے مقابلے میں اس کا رقبہ بھی دگنا ہے۔

Loading...

Comments are closed.