جنرل صاحب کہنا کیا چاہتے ہیں؟

فرسٹ جنریشن، سیکنڈ جنریشن یا تھرڈ جنریشن وار کیا ہوتی ہے؟ پاکستانیوں کی اکثریت کو نہیں معلوم۔ لیکن ففتھ جنریشن وار کیا ہے، سوشل میڈیا استعمال کرنے والے بیشتر لوگ جان گئے ہیں۔ اس بارے ان کی معلومات کا ذریعہ افواج پاکستان کے محکمہ تعلقات عامہ کے سربراہ میجر جنرل آصف غفور ہیں۔

ڈی جی آئی ایس پی آر کے مطابق یہ بیانیے کی جنگ ہے اور دشمن عناصر مین اسٹریم اور سوشل میڈیا کے ذریعے پاکستان کے خلاف بیانیے کو فروغ دے رہے ہیں۔

میجر جنرل آصف غفور سے پہلے آئی ایس پی آر کے سربراہ صرف ایک سرکاری ٹوئٹر اکاؤنٹ چلاتے تھے اور اس پر سرکاری نشریے ہی دیکھے جا سکتے تھے۔ لیکن موجودہ ڈی جی سرکاری اور ذاتی، دو ٹوئٹر اکاؤنٹ چلاتے ہیں۔ ان کے ذاتی اکاؤنٹ سے کیے گئے ٹوئٹس پر سوشل میڈیا پر اکثر بحث چھڑ جاتی ہے۔

Maj Gen Asif Ghafoor and Sana Bucha

صحافی اور اداکارہ ثنا بچہ نے گزشتہ روز ٹوئٹ کیا، دوپٹوں کی رنگائی کے ساتھ ساتھ پیکو کا کام بھی تسلی بخش کیا جاتا ہے، ڈی جی آئی ایس پی آر۔ اس ٹوئٹ پر میجر جنرل آصف غفور کی نظر پڑ گئی اور انھوں نے ثنا بچہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا، ممکن ہے کہ آپ نے ازخود یہ خدمت انجام دینے میں پہل کی ہو، جب آپ کو آئی ایس پی آر کی جانب سے ادائیگی کی جا رہی تھی۔ میں نے ایسا کچھ نہیں دیکھا۔ ایک بار پھر کہوں گا کہ اگر آپ کے کچھ واجبات باقی ہیں تو شواہد کے ساتھ وصول کرسکتی ہیں۔

اس کے بعد ٹوئٹر پر ٹاپ ٹرینڈ ’’چسنی دے منہ والی‘‘ چلتا رہا جو ثنا بچہ پر براہ راست حملہ تھا۔

چند دن پہلے انھوں نے نامعلوم افراد کو مخاطب کرتے ہوئے لکھا، برائے مہربانی آوارگان کے بارے میں فکر نہ کریں۔ انھیں سکون سے رہنے دیں۔ وہ پہلے ہی باہر اور دور ہیں۔ ان کی مشکلات سمجھنے کی کوشش کریں۔ انھیں ساتھ ساتھ رہنے دیں۔ یہ کہہ کر گویا انھوں نے امریکہ میں ہوئے ’’ساتھ فورم‘‘ کو نشانہ بنایا جس کے شرکا نے پاکستانی اسٹیبلشمنٹ پر تنقید کی تھی۔

اسی طرح میجر جنرل آصف غفور نے بھارتی پروڈکٹ برنول کے ٹرکوں کی ایک تصویر ٹوئٹ کی اور لکھا کہ یہ دوا صرف جلنے کا علاج کرتی ہے اور کوئی دوسرا آرام نہیں پہنچاتی۔ علامات سے لگتا ہے کہ ماہر نفسیات یا کسی سرجن سے مشورہ کرنا چاہیے۔ یہ پیغام کس کے لیے تھا، کوئی نہیں جانتا کیونکہ نہ اس میں کسی کو مخاطب کیا گیا تھا اور نہ کسی کے ٹوئیٹ کا براہ راست ردعمل تھا۔

Asif Ghafoor and Deepika

Asif Ghafoor and Deepika

ڈی جی آئی ایس پی آر ذاتی اکاؤنٹ سے بھارتی صحافیوں سے بھی جھگڑتے پائے گئے ہیں جب کہ مزاحمت کا راستہ اختیار کرنے والوں کی تعریف کرتے ہوئے کافی آگے چلے جاتے ہیں۔ چند دن پہلے بالی ووڈ ہیروئن دیپکا پاڈوکون نئی دلی کے ایک مظاہرے میں پہنچیں تو میجر جنرل آصف غفور نے ان کی مدح میں ٹوئٹ کیا۔ اس میں کوئی قابل اعتراض بات نہیں تھی لیکن کچھ دیر بعد انھوں نے وہ ٹوئٹ ڈیلیٹ کر دیا۔

Loading...
1 Comment
  1. read more here

    read more here

    جنرل صاحب کہنا کیا چاہتے ہیں؟ – Urdu Khabrain

Comments are closed.