اسلام میں گواہی کی اہمیت

اگر محض دعوے اور بیان کی رُو سے کسی کی کسی بھی چیز پر حق، ثابت ہو جایا کرے تو دنیا سے امان اُٹھ جائے۔ فوٹو: فائل

مزید خبریں

اﷲ تعالیٰ نے دنیا میں انسان کو انسان سے باہمی ربط دے کر ایک دوسرے کی ضرورت بنایا ہے، بعض دینی اور دنیاوی معاملات میں بسا اوقات ایسی صورتیں بھی سامنے آتی ہیں کہ صاحبِ معاملہ کسی پر کسی چیز کا دعویٰ کرتا ہے کہ یہ میرا حق ہے لیکن تنہا اُس کے اقرار یا دعوے یا بیان کا کوئی اعتبار نہیں کیا جاتا۔ اس لیے نہیں کہ وہ ناقابل اعتبار ہے، بل کہ اس لیے کہ اگر محض دعوے اور بیان کی رُو سے کسی کی کسی بھی چیز پر حق، ثابت ہو جایا کرے تو دنیا سے امان اُٹھ جائے اور لوگوں کا جینا دو بھر ہوجائے۔

حضور اقدسؐ کے ارشاد کا مفہوم ہے: ’’ اگر لوگوں کو محض، دعوے کی وجہ سے دے دیا جایا کرے تو کتنے ہی لوگ خون اور مال کا دعویٰ کر ڈالیں گے، ولیکن مدعی (دعوے دار) کے ذمے بَینہ (گواہ) ہے اور مُنکر پر قسم۔‘‘ (مسلم و بیہقی) تو ظاہر ہو ا کہ مدعی اپنے دعوے کے ثبوت، یا اپنے کسی حق کو ثابت کرنے کے لیے حاکم کی مجلس میں ایسے اشخاص کو پیش کرے جو اس کے دعوے کی تصدیق کریں۔ لفظ شہادت کے ساتھ کسی کی تصدیق کرنے یا سچی خبر دینے کو شہادت یا گواہی کہتے ہیں۔ پھر چوں کہ شہادت بھی شرعاً ایک خاص اعزاز و منصب ہے، اس کے اہل وہی ہیں جن کی سیرت و کردار پر معاشرے کو اطمینان ہو اور جو اپنے اخلاق و دیانت کے لحاظ سے بالعموم لوگوں کے درمیان قابل اعتماد سمجھے جاتے ہوں۔ جن کی بات پر اعتبار کیا جاتا ہو اور جن کی دیانت عام طور پر مشتبہ نہ ہو۔

شریعتِ مطہرہ کے مطابق جب مدعی گواہوں کو طلب کرے تو انہیں گواہی چھپانا جائز نہیں۔ بل کہ مدعی کے طلب کرنے پر گواہی دینا لازم ہے، بل کہ اگر گواہ کو اندیشہ ہو کہ اگر میں نے گواہی نہ دی تو صاحبِ حق کا حق تلف ہوجائے گا۔ یعنی اُسے معلوم ہی نہیں ہے کہ فلاں شخص معاملے کو جانتا ہے تو اُسے گواہی کے لیے کیسے طلب کرے گا، اس صورت میں بغیر طلب بھی گواہی دینا لازم ہے۔ البتہ حدود کی گواہی میں دو پہلو ہیں، ایک ازالہ مُنکر یعنی بُرائی کا ازالہ اور رفع فساد کہ معاشرہ میں فساد برپا نہ ہو اور دوسرا مسلمان کی پردہ پوشی۔ اس لیے حدود کی گواہی میں گواہ کو اظہار و اخفاء کا اختیار ہے کہ پہلی صورت اختیار کرے اور گواہی دے تاکہ مجرم اپنی سزا کو پہنچے یا پھر دوسری صورت زیادہ بہتر ہے۔

حدیث شریف میں فرمایا جو مسلمان کی پردہ پوشی کرے۔ اﷲ تبارک و تعالیٰ دنیا و آخرت میں اُس کی ستاری کرے گا۔ ہاں جس پر جُرم ثابت ہوچکا وہ بے باک و بدلحاظ ہو، حدود شرعیہ کی محافظت نہ کرتا ہو ا ور مسلمان اس کے کرتوتوں سے نالاں ہوں اور اس کی غلط روی سے دوسروں کے اخلاق و عادات اور کردار کے خراب ہونے کا اندیشہ ہو تو پہلی صورت اختیار کرے، تاکہ لوگ اس کی شرارتوں اور بد کرداریوں سے محفوظ رہیں۔ ایسے ہی چوری میں مال لینے کی شہادت دینا واجب ہے تاکہ جس کا مال چوری ہوگیا ہے اُس کا حق تلف نہ ہو۔ اتنی احتیاط کرسکتا ہے کہ چوری کا لفظ نہ کہے۔ اتنا کہنے پر اکتفاء کرے کہ اُس نے فلاں شخص کا مال لیا یہ نہ کہے کہ چوری کی۔ اس طرح احیاء حق بھی ہوجاتا ہے اور پردہ پوشی بھی۔ (درمختار، روالمحتار)

جھوٹی گواہی کا وبال: رسول اکرمؐ کے ارشاد کا مفہوم: ’’جھوٹی گواہی بُت پُوجنے کے برابر کی گئی۔ جھوٹی گواہی بُت پرستی کے برابر کی گئی۔ جھوٹی گواہی، شرک کے برابر کر دی گئی۔‘‘ تین بار یہ فرما کر حضور اکرم ﷺ نے یہ آیت اُس کی سند میں پڑھی کہ اﷲ تعالیٰ فرماتا ہے: ’’ بتوں کی ناپاکی سے بچو اور جھوٹی بات سے بچو۔ اﷲ تعالیٰ کے لیے باطل سے حق کی طرف مائل ہوجاؤ ۔ اُس کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرو۔‘‘ ( ترمذی، ابن ماجہ) رسول اﷲ ﷺ فرماتے ہیں : ’’جھوٹے گواہ کے پاؤں جگہ سے ہٹنے نہ پائیں گے کہ اﷲ تعالیٰ اس کے لیے جہنم واجب کر دے گا۔‘‘ (ابن ماجہ) ایک حدیث شریف میں ہے کہ جو گواہی کے لیے بلایا گیا اور اُس نے گواہی چھپائی یعنی ادا کرنے سے گریز کیا وہ ویسا ہی ہے جیسا جھوٹی گواہی دینے والا۔‘‘ ( طبرانی)

مندرجہ ذیل افراد کی گواہی شرعاً مقبول و معتبر نہیں۔

کافر کی گواہی مسلم کے خلاف اور مرتد کی گواہی اصلا مقبول نہیں۔ دو لوگوں میں دنیاوی عداوت ہو تو ایک کی گواہی دوسرے کے خلاف۔ جو شخص گناہ کبیرہ کا ارتکاب یا صغیرہ پر اصرار کرتا ہو کہ وہ اس کی عادت سی ہوگئی ہے۔ بچے کی گواہی اور ایسے لوگوں کی گواہی جو دنیاوی باتوں سے بے خبر رہتے ہیں۔ جس پر حد قذف قائم کی گئی ہے۔

جس کا جھوٹا ہونا مشہور ہے یا جھوٹی گواہی دے چکا ہے۔ زوج و زوجہ میں سے ایک کی گواہی دوسرے کے حق میں اور اگر ایک دوسرے کے خلاف ہوں تو مقبول ہوجائے گی۔ اولاد کی گواہی ماں باپ، دادا دادی کے حق میں اور اُن کی گواہی اولاد کے حق میں۔ کسی کا ری گر کے پاس کام سیکھنے اور اس کی کفالت میں رہنے والوں کی گواہی، اُستاد کے حق میں۔ گویّے، گانے والی یا بہ طور پیشہ نوحہ کرنے والی عورت۔ جو شخص اٹکل پَچوّ باتیں اڑاتا ہو۔ جو کثرت سے قسم کھاتا یا اپنے بچوں کو یا دوسروں کو گالی دینے کا عادی ہو۔ جس کا پیشہ دلالی ہو کہ کثرت سے جھوٹ بولتا ہے۔

تھانے کچہری کا پیشہ کرنے والے جو خود جھوٹ بولتے اور دوسروں کو تلقین کرتے ہیں، کی گواہی بھی قابل قبول نہیں۔ مرُغ بازی، کبوتر بازی اور دوسرے ایسے ہی کھیل کود میں وقت گنوانے والے۔ جو شخص گناہ و حرام کی مجلس میں بیٹھتا ہے اگرچہ وہ خود اس حرام کا مرتکب نہیں۔ سود خور، جواری، علی الاعلان شطرنج کھیلنے والا۔ بغیر عذر شرعی نماز روزہ قضا کرنے والا یا جماعت ترک کرنے والا۔ جب کہ کوئی عذر شرعی نہ ہو۔ حقیرو ذلیل افعال میں گرفتار و مشغول رہنے والا۔ مثال کے طور پر راستے میں پیشاب کرنا، راستے یا بازاروں میں کوئی چیز لوگوں کے سامنے کھانا، صرف پاجامہ یا تہ بند پہن کر، بغیر کرتا پہنے یا بغیر چادر اوڑھے عام گزرگاہ پر چلنا، لوگوں کے سامنے پاؤں دراز کرکے بیٹھنا ، ننگے سر ہوجانا جہاں اس کو خفیف الحرکتی ، بے ادبی و بد شرمی تصور کیا جاتا ہو، وغیرہا۔ جو شخص بزرگان دین، پیشوایانِ اسلام مثال کے طور پر صحابہ و تابعین، و ائمہ اہل بیت اطہارؓ، خصوصاً امام حسینؓ شہید کرب و بلا اور ازواج مطہراتؓ کو بُرے الفاظ سے علانیہ یاد کرتا ہو، اس کی گواہی بھی مقبول نہیں۔ ان ہی بزرگان دین سلف صالحین میں امام اعظم ابوحنیفہؒ بھی ہیں۔ (در مختار۔ روالمحتار، عالمگیری )

اﷲ تعالیٰ ہمیں سچی گواہی دینے والا مسلمان بنائے۔ آمین

Loading...

Comments are closed.